Tadbirat al-Ilahiyya | اصلاح انسان کی خدائی تدبیرات | شیخ اکبر ابن العربی | ابرار احمد شاہی

Tadbirat al-Ilahiyya | اصلاح انسان کی خدائی تدبیرات | شیخ اکبر ابن العربی | ابرار احمد شاہی

-20%Featured
4 customer reviews Sold: 19

 2,400

Arabic Title: التدبيرات الإلهية في إصلاح المملكة الإنسانية
Urdu Title: اصلاح انسانی کی خدائی تدبیرات
Author: Shaykh al-Akbar Muhyiddin Ibn al-Arabi
Editor: Shaykh Ahmed Muhamma Ali, Abrar Ahmed Shahi
Translated by: Abrar Ahmed Shahi
Publisher: Ibn al-Arabi Foundation
Pages: 432
Paper Type: 70gsm IK imported
Year of Publication: 2020
Edition: 3rd
Binding: Hardbound مجلد
Dimensions: 255 × 165 mm
Weight: 0.80 kg

Availability: 46 in stock (can be backordered)

 2,400

Availability: 46 in stock (can be backordered)

Add to cart
Buy Now

اصلاح انسان کی خدائی تدبیرات

الحمد لله الذي لا إله إلا هو، والصلاة والسلام على سيدنا محمد وعلى آله وسلم تسليما كثيرا. اما بعد: آج وہ مبارک دن ہے کہ ہم آپ حضرات کی خدمت میں شیخ اکبر محی الدین ابن العربی کی کتاب «التدبیرات الإلهية في إصلاح المميكلة الإنسانية» “اصلاح انسان کی خدائی تدبیریں” تحقیق شدہ عربی متن، سلیس اردو ترجمے اور شیخ البیتامی کی شرح سے منتخب شدہ حواشی کے ساتھ شائع کرنے کی سعادت حاصل کر رہے ہیں۔ اس کتاب کی تالیف کے بارے میں شیخ اکبر فرماتے ہیں:
” ہماری یہ کتاب لکھنے کی وجہ یہ بنی کہ جب میں نے شیخ الصالح ابو محمد الموروری سے شہر مورور میں ملاقات کی تو اُن کے پاس ’’سر الاسرار‘‘ (رازوں کا راز) نامی ایک کتاب دیکھی جو ذوالقرنین کے استاد نے اس وقت لکھی تھی جب وہ اپنے شاگرد کے ساتھ(سفر پر) جانے سے معذور تھا۔ لہذا ابو محمد نے مجھے کہا: اس مولف نے صرف دنیاوی مملکت کی تدبیر میں غور کیا ہے جبکہ میری آپ سے یہ گزارش ہے کہ آپ مملکتِ انسانی کی اُس سیاست سے اِس کا موازنہ کریں جس میں ہماری سعادت ہے۔ لہذا میں نے آپ کی فرمائش قبول کی اور اس کتاب میں (اس باطنی) مملکت کی تدبیر کے ایسے مطالب جمع کیے ہیں جو کہ اُس فلسفی (کے جمع کردہ مطالب) سے بہت زیادہ ہیں۔ میں نے اس میں اُن باتوں کو بھی واضح کیا جو وہ فلسفی اِس بڑی بادشاہت کی تدبیر میں چھوڑ گیا تھا۔ اور یہ سب میں نے شہر مورور میں چار ایام سے بھی کم وقت میں تحریر کیا۔ اُس فلسفی کی کتاب میری اس کتاب کی ضخامت کا ایک تہائی یا ایک چوتھائی ہو گی۔ (میری) اِس کتاب سے بادشاہوں کا خادم ان کی خدمت میں، اور راہِ آخرت کا مسافر اپنے نفس کی اصلاح میں فائدہ اٹھا سکتا ہے۔ ہر ایک کا حشر اس کی نیت اور ارادے کے مطابق ہی ہو گا۔ واللہ المستعان۔

اس سے پہلے یہ کتاب عالمی افق پر متعدد بار شائع ہو چکی ہے۔ اس کا سب سے قدیمی ایڈیشن سن 1919ء میں نائبرگ کی تحقق سے شہر لیڈن میں مطبع برل سے شائع ہوا تھا۔ اس ایڈیشن کی تیاری میں اگرچہ ایک سے زائد مخطوطات سے مدد لی گئی لیکن وہ قدیمی نہ تھے، لہذا متن میں بھی سقم موجود رہا۔ پھر متعدد بار عرب دنیا میں یہ کتاب مختلف اشاعتی اداروں کی جانب سے شائع ہوتی رہی ان میں مکتبہ بحسون 1993ء، مکتبہ الثقافہ الدینیہ 1998ء دار الکتب العلمیہ2004ء اور سعید عبد الفتاح کی تحقیق سے سن 2002ء میں مکتبہ الانتشار سے شائع ہوئی۔ اگرچہ سعید عبد الفتاح نے اس کتاب کی دوبارہ سے تحقیق کی لیکن مسئلہ وہیں کا وہیں تھا؛ یعنی یہ مخطوطات قدیمی نہ تھے۔ لہذا ایک حتمی اور مستند متن کی تیاری کی ضرورت محسوس کی جا رہی تھی جس کا اظہار محترمہ جین کلارک نے ہمارے ساتھ خط و کتابت میں بارہا کیا۔
اسی طرح اس کتاب کے مختلف زبانوں میں متعدد تراجم بھی ہوئے۔ 1973 ء میں اسے سب سے پہلے ترکی زبان میں ترجمہ کیا گیا جو استنبول سے شائع ہوا۔ پھر سن 1992 میں مصطفی طاہر علی کا کیا گیا ترکی ترجمہ استنبول سے شائع ہوا۔ 1997ء میں شیخ طوسن بیرک الجریری الخلوتی نے اس کے عربی مفاہیم کو انگریزی میں نقل کیا۔

منہج تحقیق و ترجمہ

اسے حسن اتفاق کہیے یا امداد غیبی کہ خوش قسمتی سے ہمیں اس کتاب کا وہ نسخہ میسر آ گیا جس کے بعد ہمارے لیے اس کتاب پر کام کرنا بہت ہی آسان ہو گیا اور یہ مصنف کے ہاتھ سے لکھا نسخہ یوسف آغا + چوروم ہی ہے۔ مغربی خط میں لکھا یہ نسخہ نہایت ہی واضح ہے جس کو پڑھنا نہایت آسان ہے۔ اس طرح لگتا ہے جیسے شیخ اکبر نے الفاظ کو دھاگوں میں پرویا ہے، یوں اس نسخے میں عبارت کا حسن نمایاں ہے۔ اس نسخے کی دستیابی کے بعد ہمیں زیادہ مسائل کا سامنا نہیں کرنا پڑا کیونکہ اب ہمارے پاس ایک ایسا روشن معیار موجود تھا جس پر ہم باقی نسخوں کو پرکھ سکتے تھے۔
یوں اللہ تعالی کے فضل و کرم سے ہم اس کتاب کی بنیاد بننے والے عربی متن کو ترتیب دینے میں کامیاب ہو ئے اور یہ متن کافی حد تک قابل اطمینان تھا۔ اب دوسرے مرحلے میں اس عربی متن کا دیگر تین یا چار نسخوں سے موازنہ کیا جا نا تھا۔ ایک ایک لفظ کو چاروں نسخوں میں دیکھا گیا، کمی یا زیادتی کو حاشیے میں لکھا گیا اور اشکالات اور ابہامات کا ازالہ کیا گیا۔ یہ سارا عمل نہایت ہی صبر آزما اور تکلیف دہ تھا۔ لیکن اُس پاک ذات کی توفیق اور غیبی امداد سے ہم نے یہ مرحلہ بھی خوش اسلوبی سے طے کیا۔ اب عبارت کو آخری اور حتمی شکل دینے کے لیے ہمارے پاس اس کے سوا کوئی چارہ نہ تھا کہ ہم اسے شیخ عبد العزیز المنصوب کے پاس یمن روانہ کریں اور وہ اس کی نوک پلک سنواریں، اعراب اور علامات وقف کو چیک کریں اور آخری حتمی قابل اشاعت عبارت ہمارے سپرد کریں۔ اللہ کے کرنے سے یہ مرحلہ بھی نہایت خوبی سے سرانجام پایا۔ اب ہم پورے وثوق سے یہ کہہ سکتے ہیں کہ روئے زمین پر شائع شدہ حالت میں یہی اس کتاب کا بہترین متن ہے۔ اور یہ ہمارے لیے ایک اعزاز کی بات ہے کہ شیخ اکبر ابن العربی کے علوم کی ترویج میں ابن العربی فاونڈیشن بین الاقوامی اداروں سے کسی طرح بھی پیچھے نہیں۔ اس سلسلے میں ہم اپنے تمام قارئین کو بھی مبارک باد پیش کرتے ہیں۔ اب ذرا اردو ترجمے کی بات ہو جائے، ا س کتاب کا اردو ترجمہ سن 2008ء میں شائع ہو چکا تھا لیکن جیسا کہ میں نے پہلے عرض کیا وہ ان شائع شدہ متون پر بھروسا کر کے کیا گیا تھا اور وہ ترجمہ اس مستند عبارت کے مطابق نہ تھا۔ لہذا یہ طے پایا کہ کتاب کاترجمہ الف سے ی تک مکمل چیک کیا جائے گا، صرف یہ نہیں کہ جہاں عبارت تبدیل ہو وہاں سے اسے تبدیل کر لیا جائے۔ اس کا بنیادی مقصد تو یہی تھا کہ اغلاط کو کم سے کم کیا جائے، ترجمے کو مزید سلیس بنایا جائے،چونکہ یہ ترجمہ پرانے متن سے کیا گیا تھا لہذا اس کو نئے متن سے ہم آہنگ کرنے کے لیے مکمل نظرثانی کی گئی۔
“اصلاح نفس کا آئینہ حق” کے بعد اِس کتاب میں بھی یہ خصوصیت رکھی گئی ہے کہ ترجمے میں اسلوب شیخ کی پیروی کی گئی ہے؛ مثلا نص میں جہاں آپ نے مسجع و مقفیٰ رنگ دیا ہے ترجمے میں بھی وہ رنگ دکھانے کی کوشش کی گئی ہے۔ جہاں آپ حقائق کی بات کرتے ہوئے واضح کلام کرتے ہیں وہاں ترجمے میں بھی وضاحت کو اولین ترجیح دی گئی ہے۔ جہاں آپ نے عربی روز مرہ اور محاورے کااستعمال کیا ہے ترجمے میں اردو روز مرہ اور محاورہ استعمال کیا گیا ہے۔ غرض اپنی طرف سے پوری کوشش کی گئی ہے کہ ترجمہ بھی اسلوبِ شیخ سے ہٹنے نہ پائے۔
پھر اس ترجمے کی ایک اور خصوصیت کا ذکر کرنا چاہوں گاکہ ترجمے میں موجود ہر لفظ اردو زبان کی معیاری کتب لغت سے تصدیق شدہ ہے۔ آپ کو اس ترجمے میں استعمال شدہ % 99 فیصد الفاظ کے مطلب لغت کی کتابوں میں مل جائیں گےجس کا فائدہ یقینا عام قارئین کو ہو گا۔ پہلے شیخ اکبر کے تراجم پر یہ اعتراض ہوتا تھا کہ ان میں موجود اردو الفاظ لغت کی کتابوں میں بھی نہیں ملتے تو عبارت کا مطلب کہاں سمجھ آئے گا لیکن ہماری اس کتاب میں ہر لفظ کو مستند کتب لغت سے تصدیق کے بعد شامل کیا گیا ہے۔

 

 

اشاعتی معیار


ہم نے اس عبارت کو اشاعت کے بنیادی اصولوں سے مزین کر کے شائع کیا ہے جو کہ مندرجہ ذیل ہیں:

1. عربی عبارت میں موجود تمام قرآنی آیات کی تخریج کی گئی ہے۔
2. کتاب میں موجود احادیث نبویہؐ کی کتب احادیث سے تخریج کی گئی ہے۔
3. کتاب کی عربی اور اردو دو فہرستیں مرتب کی گئی ہیں تاکہ وہ حضرات جو اردو نہیں جانتے اور عربی متن تک رسائی حاصل کرنا چاہتے ہیں ان کے لیے آسانی ہو۔
4. خوش قسمتی یوں بھی ہمارے شامل حال رہی کہ اس کتاب پر دوبارہ کام کے دوران اس کی ایک نہایت ہی مستند شرح ہمارے ہاتھ لگی۔ یہ شرح شیخ عبد الغنی النابلسی  کے شاگرد شیخ البیتامی نے لکھی ہے جو کہ متن کتاب سے دو گنا ضخیم ہے۔ شرح نے ہماری مدد اس طرح سے کی کہ جن مشکل مقامات پر حواشی کی ضرورت تھی وہ حواشی ہم نے اسی شرح سے اخذ کر لیے۔ ان حواشی کو لکھنے میں صرف وہی عبارات اخذ کی گئی ہیں جن کو اصل متن کی شرح محسوس کیا گیا ہے، عبارتی تسلسل کو زیادہ اہمیت نہیں دی گئی مگر یہ کوشش کی گئی ہے کہ یہ عبارت بھی اپنے اصل سیاق و سباق سے نہ ہٹنے پائے۔
5. کتاب کا ترجمہ نہایت سلیس رکھا گیا ہے اور ہر مشکل عربی لفظ کے مقابل اردو لفظ لانے کی کوشش کی گئی ہے الاّ یہ کہ وہ شیخ اکبر کی اصطلاح ہو۔ اردو ترجمے میں مفاہیم کی روانی اور سلاست پر توجہ دی گئی ہے لیکن بعض ناگزیر وجوہات کی بنا پر مکمل ترجمہ کماحقہ کرنا ناممکن ہے۔ عربی متن ساتھ پیش کرنے کا بنیادی مقصد بھی یہی ہے کہ کلام سے دلیل پکڑنے کی غرض سے اصل عربی سے رجوع کیا جائے اور ترجمے کو صرف فہم کا ایک ذریعہ سمجھا جائے، بلکہ جو حضرات عربی پڑھنے اور سمجھنے کی صلاحیت رکھتے ہوں انہیں عربی متن ہی پڑھنا چاہیے۔
6. علوم شیخ اکبر کے ترجمے کا حق ادا کرنا تو کسی کے بس کی بات نہیں، اور نہ ہی ہمارا یہ دعوی ہے۔ ہم نے اپنی سی کوشش کی ہے کہ ترجمہ شیخ اکبر کی عمومی فہم کے مطابق سلیس اور آسان ہو، لیکن اگر کسی مقام پر ہم عربی متن اور ترجمے کو شیخ اکبر محی الدین ابن العربی  کی مراد کے مطابق پیش نہیں کر سکے تو ہم ان سے معافی کے خواستگار ہیں۔
7. کتاب کو بڑے سائز پر بہترین صورت میں شائع کیا جا رہا ہے۔ اشاعت کتاب کے سلسلے میں بین الاقوامی معیار کو سامنے رکھا گیا ہے۔

ہم بارہا اس مبارک عزم کا اظہار کر چکے ہیں کہ جدید ترین مناہج کو بروئے کار لا کر ابن العربی فاؤنڈیشن سے چھپنے والی ہر نئی کتاب کو تحقیق شدہ عربی متن اور سلیس اردو ترجمے کے ساتھ شائع کیا جائے گا۔ آج ہمیں خوشی ہے کہ اس پاک ذات نے ہمیں اپنے عزم پر عمل پیرا ہونے کی توفیق دی، بیشک محض اس کی توفیق اور عطا سے ہی ہم اس منزل کو پانے میں کامیاب ہوئے ہیں۔ اور اگر ہمیں اپنے مرشد کی صحبت نصیب نہ ہوتی تو اس ذات تک پہنچنا بھی ممکن نہ تھا۔اللہ سے دعا ہے کہ ہمیں ہماری نیتیں ٹھیک رکھنے کی توفیق عطا فرمائے اور ہمارے دلوں کو ٹیڑھا ہونے سے بچائے۔ یااللہ تو جانتا ہے کہ ہمارے اس عمل میں بنیادی مقصد تیری رضا کا حصول اور لوگوں تک حق بات کا پہنچا دینا ہے اس لیے ہمارے اس حقیر سے عمل کو اپنی بارگاہ میں شرف قبولیت بخش اور ہمیں آئندہ بھی ان اعمال صالحہ کی توفیق دے جو ہمارے لیے تیری طرف سے قبولیت کی نشانی ہوں

 

Tadbirat al-Ilahiyya | اصلاح انسان کی خدائی تدبیرات | شیخ اکبر ابن العربی | ابرار احمد شاہی

The one and only Urdu translation of the book available in Market
Order your copy now
Click Here
Weight 1 kg
size

new

Binding

Edition

Book Size

Langauge

,

Paper type

Printing Quality

Publisher

4 reviews for Tadbirat al-Ilahiyya | اصلاح انسان کی خدائی تدبیرات | شیخ اکبر ابن العربی | ابرار احمد شاہی

  1. abrarshahi

    Given that such books are not available in English, it would be very helpful if a one page is added with translation of key Urdu terms used in the book for people like me who is not very good in Urdu yet don’t want to miss the wisdom and mystical intuition of Shaykh al Akbar. otherwise, it’s a commendable effort to make such books available in Urdu. Wasalam.

  2. abrarshahi

    بہت بہترین کتاب ہے کہ اس میں شیخ نے روح نفس اور خواہش کے مقامات کو آسان انداز میں سمجھایا ہے۔ ابن العربی فاونڈیشن کا بہت بہت شکریہ کہ انہوں نے شیخ اکبر کی کتابیں آسان زبان میں ترجمہ کروائیں تاکہ ہم جیسے لوگ بھی فائدہ اٹھا سکیں

  3. M. Hussain Khawar

    I don’t think that I v capacity to comment on the ever greatest work of human history by Hazrat Shykh e Akbr (RA) however when I am to say about this translation it’s really a blessing for me that gives me a way to understand Srkar Shykh e Akbr (RA)

  4. Waleed A.

    Great effort

Add a review

Our Publishers

You may also like…